رنگ برسات نے بھرے کچھ تو

رنگ برسات نے بھرے کچھ تو

زخم دل کے ہوئے ہرے کچھ تو

فرصتِ بے خودی غنیمت ہے

گردشیں ہو گئیں پرے کچھ تو

کتنے شوریدہ سر تھے پروانے

شام ہوتے ہی جل مرے کچھ تو

ایسا مشکل نہیں ترا ملنا

دل مگر جستجو کرے کچھ تو

آؤ ناصر کوئی غزل چھیڑیں

جی بہل جاۓ گا ارے کچھ تو

0 تبصرہ جات:

Post a Comment