دیوانہ بنانا ہے تو دیوانہ بنا دے

دیوانہ بنانا ہے تو دیوانہ بنا دے

ورنہ کہیں تقدیر تماشا نہ بنا دے

اے دیکھنے والو مجھے ہنس ہنس کہ نہ دیکھو

تم کو بھی محبت کہیں مجھ سا نہ بنا دے

میں ڈھونڈ رہا ہوں میری وہ شمع کہاں ہے

جو بزم کی ہر چیز کو دیوانہ بنا دے

آخر کوئی صورت بھی تو ہو خانہء دل کی

کعبہ نہیں بنتاہے تو بت خانہ بنا دے

بہزاد ہر ایک جام پہ ایک سجدہء مستی

ہر ذرے کو سنگِ درِ جاناں نہ بنا دے

0 تبصرہ جات:

Post a Comment