پھر شامِ وصالِ یار آئی

پھر شامِ وصالِ یار آئی

بہلا غمِ روزگار کچھ دیر

پھر جاگ اُٹھے خوشی کے آنسو

پھر دل کو ملا قرار کچھ دیر

پھر ایک نشاطِ بے خودی میں

آنکھیں رہیں اشک بار کچھ دیر

پھر ایک طویل ہجر کے بعد

صحبت رہی خوشگوار کچھ دیر

پھر ایک نگار کے سہارے

دنیا رہی سازگار کچھ دیر

0 تبصرہ جات:

Post a Comment