ہر ايک زخم کا چہرہ گلاب جيسا ہے

ہر ايک زخم کا چہرہ گلاب جيسا ہے
مگر يہ جاگتا منظر بھي خواب جييسا ہے
يہ تلخ تلخ سا لہجہ، يہ تيز تيز سي بات
مزاج يار کا عالم شراب جيسا ہے
مرا سخن بھي چمن در چمن شفق کي پھوار
ترا بدن بھي مہکتے گلاب جيسا ہے
بڑا طويل، نہايت حسيں، بہت مبہم
مرا سوال تمہارے جواب جيسا ہے
تو زندگي کےحقائق کي تہہ ميں يوں نہ اتر
کہ اس ندي کا بہاؤ چناب جيسا ہے
تري نظر ہي نہيں حرف آشنا ورنہ
ہر ايک چہرہ يہاں پر کتاب جيسا ہے
چمک اٹھے تو سمندر، بجھے تو ريت کي لہر
مرے خيال کا دريا سراب جيسا ہے
ترے قريب بھي رہ کر نہ پا سکوں تجھ کو
ترے خيال کا جلوہ حباب جيسا ہے

0 تبصرہ جات:

Post a Comment