چاہت کا رنگ تھا نہ وفا کي لکير تھي

چاہت کا رنگ تھا نہ وفا کي لکير تھي
قاتل کے ہاتھ ميں تو حنا کي لکير تھي
خوش ہوں کہ وقت قتل مرا رنگ سرخ تھا
ميرے لبوں پہ حرف دعا کي لکير تھي
ميں کارواں کي راہ سمجھتا رہا جسے
صحرا کي ريت پر وہ ہوا کي لکير تھي
سورج کو جس نے شب کے اندھيروں ميں گم کيا
موج شفق نہ تھي وہ قضا کي لکير تھي
گزرا ہے سب کو دشت سے شايد وہ پردہ دار
ہر نقش پا کے ساتھ ردا کي لکير تھي
کل اس کا خط ملا کہ صحيفہ وفا کا تھا
محسن ہر ايک سطر حيا کي لکير تھي

0 تبصرہ جات:

Post a Comment