رباعیات

فراغت دے اسے کار جہاں سے
کہ چھوٹے ہر نفس کے امتحاں سے
ہوا پيري سے شيطاں کہنہ انديش
گناہ تازہ تر لائے کہاں سے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دگرگوں عالم شام و سحر کر
جہان خشک و تر زير و زبر کر
رہے تيري خدائي داغ سے پاک
مرے بے ذوق سجدوں سے حذر کر
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
غريبي ميں ہوں محسود اميري
کہ غيرت مند ہے ميري فقيري
حذر اس فقر و درويشي سے، جس نے
مسلماں کو سکھا دي سر بزيري
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
خرد کي تنگ داماني سے فرياد
تجلي کي فراواني سے فرياد
گوارا ہے اسے نظارئہ غير
نگہ کي نا مسلماني سے فرياد
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کہا اقبال نے شيخ حرم سے
تہ محراب مسجد سو گيا کون
ندا مسجد کي ديواروں سے آئي
فرنگي بت کدے ميں کھو گيا کون؟
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ترے دريا ميں طوفاں کيوں نہيں ہے
خودي تيري مسلماں کيوں نہيں ہے
عبث ہے شکوۂ تقدير يزداں
تو خود تقدير يزداں کيوں نہيں ہے؟
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کبھي دريا سے مثل موج ابھر کر
کبھي دريا کے سينے ميں اتر کر
کبھي دريا کے ساحل سے گزر کر
مقام اپني خودي کا فاش تر کر
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
نہ کر ذکر فراق و آشنائي
کہ اصل زندگي ہے خود نمائي
نہ دريا کا زياں ہے، نے گہر کا
دل دريا سے گوہر کي جدائي
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
خرد ديکھے اگر دل کي نگہ سے
جہاں روشن ہے نور 'لا الہ' سے
فقط اک گردش شام و سحر ہے
اگر ديکھيں فروغ مہر و مہ سے

 

0 تبصرہ جات:

Post a Comment