زندگی سے نظر ملاؤ کبھی

زندگی سے نظر ملاؤ کبھی

ہار کے بعد مسکراؤ کبھی

ترکِ اُلفت کے بعد اُمید وفا

ریت پر چل سکی ہے ناؤ کبھی!

اب جفا کی صراحتیں بیکار

بات سے بھرسکا ہے گھاؤ کبھی

شاخ سے موجِ گُل تھمی ہے کہیں !

ہاتھ سے رُک سکاہے بہاؤ کبھی

اندھے ذہنوں سے سوچنے والو

حرف میں روشنی ملاؤ کبھی

بارشیں کیا زمیں کے دُکھ بانٹیں

آنسوؤں سے بُجھا الاؤ کبھی

اپنے اسپین کی خبر رکھنا

کشتیاں تم اگر جلاؤ کبھی!

1 تبصرہ جات:

Muhammad Latif said...

یہ زندگی بڑی عجیب سی، کبھی گلزار سی کبھی بیزار سی
کبھی خوشی ہمارے ساتھ ساتھ ،ہے کبھی غموں کی غبار سی

Post a Comment